370

دنیا میں آج کل جنگلات کے بغیر طرقی کا خواب ادھورا ہے

کسی بھی ملک کے ترقی اور صاف ستھرے ماحول کے لئے اس ملک کے کل رقبے کا پچیس سے تیس فیصد رقبہ پر جنگلات کا ہونا ضروری ہے۔اگر ہم دیکھیں تو دنیا میں ان ممالک نے زیادہ ترقی کی ہے جہاں پر جنگلات کا رقبہ زیادہ ہے۔ جنگلات کی لکڑی کا استعمال تعمیرات میں بہت ہوتا ہے اور وہ تعمیرات دنیا میں قیمتی ہوتی ہیں جس میں لیکڑی کا استعمال زیادہ ہو. اس کے ساتھ ساتھ ہم اس کو جلانے کے لئے بھی استعمال کرتے ہیں۔ لیکن ان دونوں فائدوں کے علاوہ صاف سھتراا ماحول کے لیے جنگلات بہت ضروی ہیں. جس کے بغیر زندگی گزارنا مشکل نہ بالکل نا ممکن بھی ہے۔
آج کل جس خطرے سے دنیا زیادہ تر پریشان ہے اور دنیا کو اس کا سامنا ہے تو وہ ہے ماحولیاتی تبدیلی جس سے پوری دنیا متاثر ہو رہی ہے اور وہ خطے زیادہ اس کے لپیٹ میں ہیں جہا ں پر جنگلات کی کمی ہے اور مقررہ رقبے سے کم ہے۔ ماحولیاتی تبدیلی کے روک تھام میں جو واحد چیز اپنا موثر کردار ادا کرسکتی ہے وہ زیادہ مقدار میں جنگلات ہیں۔ کیونکہ آج کل اس ترقی یافتہ دنیا میں صنعتی ترقی بہت تیزی سے ہوئی ہے جس سے کارخانوں میں کاربن گیس اور دوسری ایسے گیسوں کا اخراج زیادہ ہورہا ہے جو ماحول کے لئے زہر قاتل ہے۔ اس سے بہت سے بیماریاں عام ہوئی رہی ہیں جس میں کینسر جیسے موضی مرض اور ہپاٹائٹس شامل ہے۔ جو زہریلی گیسوں کے اخراج کے وجہ سے ہے۔ اور جنگلات ہی واحد زریعہ ہے جو ان زہریلی گیسوں کو جزب کرتا ہے اور اس کے جگہ اکسیجن گیس کا اخراج کرتا ہے جو جانداروں کے زندگی کا لازمی جُز ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ جہاں پر جنگلات زیادہ ہو وہاں پر مقررہ مقدار میں بارشیں ہوتی ہے اور موسم خوشگوار ہوتا ہے اور اس کے ساتھ ساتھ سیلابوں کے دوران زمین کو کٹاؤ سے بچاتی ہے۔ اسی طرح جنگلات میں قیمتی جڑی بوٹیاں اگتی ہیں جو مختلف بیماریوں کی دائیوں میں استعمال ہوتی ہیں لیکن آج کل جنگلات کو لوگ تباہ کر رہے ہیں. اکثر لوگ جنگلات کو آگ لگا دیتے ہیں جو سراسر انسانیت کے خلاف کام ہے. اسمیں بہت سارے نباتات, خشرات اور حیوانات ضائع ہو جاتے ہیں. ہمیں اس قدتی نعمتوں سے فائدہ اٹھانا چاہئے. اور ہمیں ذیادہ سے ذیادہ رقبے پر جنگلات میں اضافہ کرنا چاہئے خوشی کی بات یہ کہ پاکستان میں ویسے بھی کے پی کے کی حکومت اور عوام اس مسئلے کو سنجیدگی سے حل کر رہی ہے. اسی سلسلے میں آج پاکستان ٹوبیکو کمپنی کے بونیر ٹوبیکو ڈپو میں سیکٹری فارسٹ جناب نظر حُسین شاہ صاحب, ڈی سی او بونیر صاحب اور ناظم اعلی بونیر صاحب نے جنگلات کی اہمیت پر روشن ڈالی جو ایک خوش آئیند بات ہے. ضلع بونیر کے عمائدین اور قائدین نے وعدہ کیا ہے کہ جنگلات کے فروع کے لیے ہر قسم تعاون کرینگے. تحریر. صوبیدار میجر ریٹایرڈ بخت روم شاہ تمغہ خدمت عسکری. سماجی و سیاسی کارکن پی ٹی آئی کلپانی بونیر خیبرپختونخواہ.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں