357

پی ٹی آئی سے وابستہ امیدیں

الیکشن سے پہلے ہر آدمی کو یہ تو پتہ تھا کہ خان صاحب کی پارٹی الیکشن جیت کر حکومت بنائیگی. مضبوط اپوزیشن کا بھی امکان تھا. خیر بہت سارے ناقدین کے منہ سے منفی پروپگنڈے کا زور و شور سے تشہیر بھی کیا جاتا رہا. خان صاحب کو محتلف ناموں سے بھی یاد کیا جاتا رہا. خیر جھوٹی خبریں پھلانے والوں کا منہ کالا ہوکر سب نے دیکھ بھی لیا ہے. خان جدھر سے بھی کھڑا ہوا وہاں سے بڑے بڑے برجوں کو زمین بوس کیا. خان کیا. خان نے اگر نوجوان یا ریڑھی بان کو بھی ٹکٹ دیا تو وہاں سے ماضی کے بادشاہوں کو بھی شکست دیکر پی ٹی آئی کا علم بلند کیا. بہت ساروں کے خوابوں کو چکنا چور کردیا. خیر بات کرتا ہوں ابتدائی سو دنوں کی. تو مسترد شدہ سیاستدان کہتے تھے کہ یہ کیسے کریگا. خان نے ایک تقریر کی ہے اور ہرآدمی اپنی جان اور مال کو قربان کرنے کے لیے تیار ہے. خان نے کہا کہ قرض لینے والی قوم کے وزیراعظم کی کیا غزت ہوگی. بات تو ٹھیک ہے ہمارے سابقہ وزیراعظم کے کپڑوں تک اتار دیئے گئے تھے. انشاءاللہ سو دن کا پلان کامیاب ہوگا. ایک کروڑ نوکریاں ملنگی اور پچاس ہزار گھر بھی بنینگے. لوڈشیڈنگ بھی حتم ہوگی. کسی مفکر کا بیان ہے کہ کسی کام کو جتنا بھی جلدی سے کیا جائے لیکن پھر بھی کچھ وقت لگےگا. تو عوام سے گزارش ہے کہ کچھ ہفتوں کا انتظار ہے. سب ٹھیک ہوجائےگا. انشاءاللہ کچھ دنوں میں اپ خان صاحب کا وہ تقریر ضرور سنینگے جو اقوام متحدہ کے پلیٹ فارم سے نشر ہوگا. وقت کا انتظار کریں. انشاءاللہ کے پی کے کی باصلاحیت ٹیم کے وزیراعلیٰ جناب محمود خان کی قیادت میں باقی پاکستان کے لیے ایک نمونہ کے مانند ہوگا
تخریر و تجزیہ
صوبیدار میجر (ر) بخت روم شاہ تمغہ خدمت عسکری
پی ٹی آئی بونیر خیبر پختونخواہ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں