پاکستان بمقابلہ بھارت، ایشیا کا سپر پاور کون؟

اس سے پہلے کہ پاکستان اور بھارت کے تجربات اور ٹیکنالوجی کا تقابلی جائزہ لیا جائے میں واضح کردوں کہ کولڈ سٹارٹ وار یا ففتھ جنریشن وار کا یہ بھی اصول ہے کہ تنقید، پروپیگنڈا یا کسی بھی طریقہ سےدُشمن کے حوصلے پست رکھو جبکہ یہاں ہمارے افلاطون دُشمن کی تعریفوں کے پُل باندھ رہے ہیں۔کُچھ مثالوں سے وضاحت کرنا ضروری ہے کہ کوشش اور کامیابی میں کیا فرق ہوتا ہے۔

بهارت 8 سال میں 1 مزائیل نہ بنا سکا.
کروز مزائیل .2011 ،سے 2017 تک 4 دفعہ اس کا تجربہ کیا گیا چاروں دفعہ ناکامی کا سامنا کرنا پڑا.اس مزائیل کی رینج 1000 کلومیٹر بتاتا ہے بھارت لیکن ہرباریہ میزائل کُچھ میٹر اوپر جاکر ہی ٹُھس ہوجاتا ہے.

بلاسٹک مزائیل. 2015 میں اس کا تجربہ کیا اور 2 دفعہ ناکامی کا سامنا کرنا پڑا.اس کی رینج 2000 سے 3000 تک بتا رہیں ہے جبکہ ہربار یہی میزائل اُڑنے سے پہلے پھٹ جاتا ہے.

اگنی2 . اس مزائیل کا تجربہ سال 2017 میں کیا گیا اور پہلے کی طرح اس بار بهی ناکامی ہوئی.
پریتی 4 . اس مزائیل کا 2 دفعہ تجربہ کیا گیا دونوں دفعہ ناکامی ہوئی.

بلاسٹک مزائیل نیربی . سال 2017 میں اس کا تجربہ کیا اور فیل ہوگیا.

چاندارم 1 . اس کا تجربہ 2008 میں کیا اور ناکامی کا سامنا کرنا پڑا.

چاندارم 2 .سال 2019 میں اس کا دو بارتجربہ کیا اور ناکامی کا سامنا کرنا پڑا.

بهارت 7 سال میں 1 بهی مزائیل نہ بنا سکا حتیٰ کہ دوسرے ممالک سے خریدے گئے میزائل اور ٹیکنالوجی کی تجربات میں بھی ہربارفیل ہوا ہے جسکی بڑی مثال اسرائیلی ڈربی میزائیل ہیں۔

یہ ہے ان کی ٹیکنالوجی جس کی آج پاکستان کے کچھ فیس بُکی دانشگرد تعریفیں کر رہیں۔
اس کے برعکس پاکستان نے اج تک مزائیل ٹیکنالوجی کے میدان میں یا جنگی جہازوں یا ڈرونز طیاروں ٹیکنوں جتنے بهی تجربے کئے اللہ کا لاکھ لاکھ شکر ہے کے 100 فیصد کامیاب ہوے ہیں.

فیس بُک کے ایسے سستے دانشوروں اور ارسطوؤں کو شائد معلوم ہے کہ پاکستان کوئی بھی کام کرتا ہے تو اس مقولے پر عمل کرتا ہے کہ اپنا کام خاموشی سے اس طرح کرو کہ تُمھاری کامیابی خود شور مچادے۔ بھارت کے تجربات بھلے کوشش ہیں لیکن کوشش اگر ایمانی جذبہ کے ساتھ ہو تو اللّہ کی نُصرت ہمیشہ ساتھ دیتی ہے۔

ایسے دانشگردوں سے میرا سوال ہے کے بهارت پاکستان سے سائنس کے میدان میں کیسے آگے ہے جبکہ آج۔تک وہ اپنی بنائی چیزوں کے ساتھ ساتھ دوسرے ممالک کی ٹیکنالوجی استعمال کرنے میں بھی ناکام ہیں؟ انشاءاللہ جس دن پاکستان چاند کی طرف پیش قدمی کرے گا اس دن دنیا کی کوئی طاقت ان کو اس کامیابی سے نہیں روک پائے گی اور انشاءاللہ پاکستان چاند پر سبز ہلالی پرچم گاڑ کر کامیاب لوٹےگا۔

اگر آپ ہماری رائے سے مُتفق ہیں تو کمنٹ کرکے بتائیں اور پوسٹ لازمی شئیرکریں۔
پاکستان زندہ باد، عوام وافواجِ پاکستان پائندہ باد۔۔

پاکستان بمقابلہ بهارت
فیصلہ آپ کرلیں ایشیا کا سپر پاور کون؟

اپنا تبصرہ بھیجیں