امریکہ کا سورج ڈوب رہا ہے۔ عبدالجبار دریشک کا کالم 366

امریکا کا سورج ڈوب رہا ہے۔ تحریر: عبدالجبار دریشک

Abdul Jabbar Khan Columns

امریکا کا سورج آخری بلندی پر جانے کے بعد اب بڑی تیزی سے ڈوبنے کی نزدیک پہنچ چکا ہے۔ صدر ٹرمپ خود اس سورج کو غروب کی طرف لے جانے والے امریکہ کے واحد صدر بننا چاہتے ہیں۔

امریکی معیشت اس وقت زوال پذیر ہو چکی ہے امریکا چین سے خوف ذدہ بھی ہے اور اس کے قرض سے ملک معیشت کو سہارا بھی دیے ہوئے ہے ٹرمپ نے امریکا کو عالمی سیاست میں بہت ناکام کیا ہے جس کا فائدہ روس نے اٹھتے ہوئے دنیا بھر میں تعلعات کو مضبوط بنایا ہے۔ بلکہ اپنے اتحادی نئے سرے سے تلاش کرنے شروع کردیے ہیں، امریکا نے گزشتہ دنون شام سے اپنی فوجیں واپس بلانے کا فیصلہ کیا ہے جس کو دیکھا جائے تو یہ امریکا کی ناکامی ہے کیونکہ ایران ،روس ، ترکی اور بشار یہی چاہتے تھے گزشتہ سال سے بننے والا روس، ایران ، اور ترکی کا ٹرئیکا کامیاب ثابت ہوا جس نے امریکا کو دھیکیل باہر کیا، اب چین ، پاکسان اور روس امریکا کو افغانستان جلد باہر کر دیں گے اور خود امریکا اس بات کا اعلان کر چکا ہے۔




اب تمام حالات میں شام سے امریکا کے جانے سے اسرائیل خوف زدہ ہے اور ادھر افغانستان سے جانے میں بھارت کی موت ہے بھارت کیونکہ پاکستان کو مغربی سرحدوں پر مصروف رکھنا چاہتا تھا۔

بات امریکا کی ہو رہی ہے اور اس کی معیشت کی تو وہ نہایت کی زبوحالی کی طرف جارہی ہے امریکا میں اسی سال کے دوران تیسرا شٹ ڈاؤن ہوا ہے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور قانون سازوں کے درمیان معاہدے کی ناکامی کے بعد امریکہ میں رواں سال کا تیسرے ’’شٹ ڈاؤن‘‘ کا آغاز کر دیا گیا۔متعدد وفاقی سرکاری محکمے بند ہوگئے اور 8 لاکھ سرکاری ملازمین متاثر ہوئے جو پیر کو کام پر نہیں آسکیں گے ۔

گزشتہ روز کانگریس کا اجلاس وفاقی اخراجات سے متعلق بل یا امریکی صدر کا سرحدی دیوار کی تعمیر کیلئے رقم کا مطالبہ پورا ہوئے بغیر ختم ہوگیا۔ امریکی حکومت نے رات گئے شٹ ڈاؤن کا آغاز کردیا۔




اٹھ لاکھ وفاقی ملازمین کو کرسمس کی چھٹیوں تک عارضی رخصت یا بغیر تنخوا ہ کے کام کرنے پر مجبور کیا جائیگا۔ شٹ ڈاؤن میں ناسا کے مختلف ملازمین کو گھر بھیج دیا جائیگا۔ محکمہ تجارت کے ملازمین، محکمہ ہوم لینڈ سیکیورٹی، انصاف، زراعت اور اسٹیٹ کے متعدد ملازمین کو بھی بھیجا جائیگا۔

تیسرا شٹ ڈاؤن یقین ٹرمپ کی ناکامی کا ثبوت ہے اب اگر امریکا بحران کو پاتا ہے تو وہ دنیا بھر میں اپنے فوجی اڈے بند کرنا شروع کر دے گا۔ مزید کیا ہوتا ہے وہ وقت بتائے گا

عبدالجبار دریشک

امریکہ کا سورج ڈوب رہا ہے۔ عبدالجبار دریشک کا کالم

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں