159

کرپشن اور اسکا خاتمہ، تحریر و تجزیہ صوبیدار میجر (ر) بخت روم شاہ

کرپشن کا ناسور جس ملک و قوم میں داخل ہوجائے تو اُنکی ترقی میں یہ سب سے بڑی رکاوٹ بن جاتی ہے اور اگر یہ کسی معاشرے میں پھیل جائے تو وہ معاشرہ تباہ ہوجاتا ہے۔ بدقسمتی سے کرپشن اس وقت دنیا بھر میں موجود ہے جبکہ عالمی رپورٹس کے مطابق ہمارے ملک کا شمار بھی کرپشن زدہ ممالک میں ہوتا ہے جو انتہائی افسوسناک ہے۔

کرپشن کے خاتمے کے حوالے سے لوگوں میں آگاہی پیدا کرنے کے لیے دنیا بھر میں 9 دسمبرکو ’’عالمی یوم انسداد رشوت ستانی‘‘ منایا جاتا ہے۔




لیکن وزیراعظم صاحب, عدلیہ اور نیب نے اسکو ختم کرنے کے لئے دن رات ایک کردیئے ہیں اور مستقبل قریب میں بڑے بڑے مگر مچھ پکڑے جائینگے. لیکن اسکے دائرے کو ہر ادارے, عام آدمی اور ہر عہدے کے لوگوں تک پھلانا چاہئے. کلاس فور سے لیکر ادارے کے سربراہ, چپڑاسی سے لیکر وزیراعظم تک احتساب ہونا چاہئے.

پانچ سکیل کا ملازم کیسے کروڑ پتی بنتا ہے?
کرپشن کو ختم کرنے کے لیے چینی ماڈل کو اپنایا جائے.
اگر ہم صحیح نیت اور جذبے کے ساتھ اسی طرح کام کرتے رہے تو وہ وقت دور نہیں ہے جب یہاں تمام حالات بہتر ہوجائیں گے، کرپشن بھی نہ ہونے کے برابر ہوگی اور ہم ترقی یافتہ ممالک کی فہرست میں شامل ہوں گے۔



اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں