399

ففتھ جنریشن وار اور ہائیبر ڈوار فیئر

ہائبرڈوارفیئر
پاکستان میں اس جنگ سے پہلے ففت جنریشن وار فیئر تھی جو اس ملتی جلتی ہے. لیکن یہ جنگ زرہ جدید ہے. آج کل یہ جنگ لڑی جارہی ہے. جس کے بارے میں قوم کو پتہ ہونا چاہئے. عسکری ماہرین کی آراء کاخلاصہ ان الفاظ میں بیان کیا جاسکتا ہے ۔ کہ ایسی جنگ جس میں ایک قوم اپنی طاقت کے تمام تر ذرائع اپنی مخالف قوم کو تمام تر محاذوں پر چت کرنے کے لئے استعمال کرتی ہے اور اس کے مقابلے میں دوسری قوم اپنی طاقت کے تمام تر ذرائع استعمال کرکے ہر محاذ پر اپنی مخالف قوم کے تمام حملوں کو روکتی ہے اور جوابی حملے کر تی ہے ۔ ان حملوں میں عسکری طاقت کا استعمال کم ازکم اور آخری حربہ ہوتا ہے ۔ اور اس میں ابہام کا عنصر بہت گہرا ہوتا ہےاور انکارکا آپشن بھی باقی رکھاجاتا ہے اس جنگ میں اقتصادی، صنعتی، تجارتی، ٹیکنالوجی، معاشرتی، ثقافتی، نظریاتی، سفارتی، سائنسی، سائبر وار فیئر، انفرمیشن وارفیئر، ہارڈوئیر، سافٹ وئیر ، الیکٹرانکس، آرٹیفیشل انٹیلی جنس، الیکٹرانک و پرنٹ میڈیا، سوشل میڈیا, پروپیگنڈہ، سب ورژن، بیان بازی، ایٹمی طاقت، روایتی فورسز، اسپیشل فورسز، ممنوعہ ہتھیار، انٹیلی جنس، جاسوسی، نان اسٹیٹ ایکٹرز، پراکسی، کریمنلز، باغی، نقلی کرنسی، نشہ، تشدد، امداد، نرمی اور ہرممکن ذرائع, خاص انداز میں استعمال کرتے ہوئے دشمن کے خلاف کبھی نہ ختم ہونے والی جنگ لڑی جاتی ہے جس میں ابہام اور انکارکا پہلو باقی رکھا جاتا ہے ۔اور اس جنگ کاسب سے بڑا ہدف عوام ہوتے ہیں. اس جنگ میں لوگ سیاستدانوں کو بھی شامل کرتے ہیں. یعنی ایک دوسرے پر الزامات اور لڑائی جھگڑے.مختلف سیاسی جماعتوں کے کارکن ایک دوسرے کے خلاف سوشل میڈیا پر نازیبا اور اختلافی بیانات دیتے ہیں. اس جنگ کے ذریعہ معاشیات کو تباہ کیا جاتا ہے.
تحریر
صوبیدار میجر (ر) بخت روم شاہ تمعہ خدمت عسکری
سیاسی و سماجی کارکن پی ٹی آئی بونیر خیبرپختونخواہ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں