بے شک میرے عیبوں کے بدلے مجھے سنگسار کردو اے دوست

مگر پہلا پتھر وہ شخص اٹھاۓ جس میں کوئی عیب نہ ہو.

شاعر نے جو کچھ کہا ہے. بڑا واضح کہا ہے کہ کوئی شخص یا ادارہ اس وقت عیب سے پاک نہی. تو پھر الکشن کس چیز کا. الیکشن سے پہلے اختساب ضرور ہونا چاہئے. اگر اختساب کیے بغیر الیکشن ہوا تو پھر وہی لوگ آئینگیں اور ووٹر پھر پانچ سال کے لیے مردہ باد اور زندہ باد کے لیئے ری فیول ہوجائینگیں. جو ہماری نسلوں کا نسل در نسل سے کام چلتا آرہا ہے. آج وہ سیاستدان جو ہر دور میں خکومتوں میں شامل رہے ہیں. یہ لوگ اپنی سیاست کو زندہ رکھنے کے لیے اپنی وفاداریاں تبدیل کرتے ہوئے (سیاسی لوٹے) نظر آرہے ہیں. انکو ملک کی ترقی سے کوئی غرض نہی یہ صرف اقتدار کی کرسی حاصل کرنا چاہتے ہیں. کچھ لوگ تو ایسے بھی ہیں جنھوں نے پاکستانی میں موجود کوئی پارٹی نہی چھوڑی اب آخر میں ایک ہی پارٹی رہ رہی تھی جسکانام پی ٹی آئی ہے. ان فصلی بٹیروں کو پتہ ہے کہ ساری عوام عمران کے ساتھ ہے جس نے عمران کا ہاتھ پکٹر لیا وہ کامیاب رہے گا. جب یہ سارے یہاں آکر ٹکٹ کے امیدوار بن جائینگے تو وہ نظریہ کہاں گیا جو تبدیلی لا رہی تھی. جو اقتدار کو نچلے لیول یا متوسط طبقہ میں تبدیل کرنا چاہ رہی تھی. میں عمران کا ساتھی ہوں اور تبدیلی کے لیے دن رات ایک کرکے کام کر رہا ہوں. لیکن ورکرز کی باتیں روزمرہ کی بنیاد پر سن سن کر پریشان ہوجاتا ہوں کہ ایسا نہ ہو کہ نظریاتی کارکن کو نظر انداز کیا جائے اور آخر میں ہم اسی جگہ پر واپس آجآییں جو سفر ہم نے بائیس سال پہلے شروع کیا تھا. موجودہ نظام میں تو تبدیلی کی امید دن بدن کم ہوتی نظر آرہی ہے. تو پھر کیا نیا راستہ انقلاب کا رہ گیا ہے کہ عوام سڑکوں پر نکل آئے اور ان کرپٹ مافیا سے اپنی لوٹی ہوئی دولت واپس چھین لے. نہی ابھی وقت نہی شائد الیکشن سے پہلے نگران خکومت کچھ کر لیے. ورنہ نتیجہ وہی ہوگا جو ستر سالوں سے چلا آرہا ہے. کرپشن ہمارے رگوں میں بہتے ہوئے خون کی طرح چل رہاہے. ایک پانچ سکیل کا سرکاری نوکر کروڑوں کی جائداد کیسے بنا سکتا ہے. کیا کرپشن صرف نواز شریف نے کی ہے باقی سارے ہی فرشتے ہیں. اگر اختساب کرنے والے لوگ واقعی اختساب کرنے میں سنجیدہ ہیں تو سب کا اختساب کریں. جہاں 62 اور 63 کی آئینی شقیں استعمال کی جارہی ہیں تو پھر وہاں پر آرٹیکل 6 کو بھی استعمال کیا جائے تاکہ ملک ایک ہی دفعہ صاف ہوجائے.
آخر میں پھر مجھے پھر شاعر کی شاعری لکھنی پڑیگی.
بےشک میرے عیبوں کے بدلے مجھے سنگسار کردو اے دوست

مگر پہلا پتھر وہ شخص اٹھاۓ جس میں کوئی عیب نہ ہو.
تحریر
صوبیدار میجر (ر) بخت روم شاہ تمعہ خدمت عسکری
سیاسی و سماجی کارکن پی ٹی آئی بونیر خیبر پختونخواہ

اپنا تبصرہ بھیجیں