بینظیر انکم سپورٹ پروگرام، صحت کارڈ اور غرباء کےلئے دوسرے سرکاری سکیمز

ملک میں غربت کے خاتمے کیلئے پھر سے خصوصی سروے کیا جائے. تاکہ مستحق افراد کا تعین کیا جاسکے. ویسے بھی ہر پانچ سال بعد یا مردم شماری کے بعد یہ فہرست ریفریش ہونے چاہئی. لیکن بدقسمتی سے اس غرباء کے فہرست میں ایسے مالدار لوگوں کے نام بھی شامل ہیں جو ہر روز ہزاروں غریبوں کی کفالت کا ذمہ اٹھانے کے قابل ہیں. اخلاقی طور پر ان لوگوں کو فی لفور خود جاکر اپنا نام فہرست سے نکالنا چاہئے تاکہ کسی اور غریب کو موقع مل جائے اور اسکے گھر کا چوھلہ بھی جلتا رہے. اس ایشو کو اٹھانے کا مقصد یہ ہے کہ اب وزیراعظم عمران خان غریبوں کو مفت مکان دینے کا ارادہ کرچکے ہیں. ایسا نہ ہو کہ مکان بھی ان جیسے جعلی غریبوں کو مل جائے. ویسے تو غریب کے حق کو مارنے والوں کو شرم آنا چاہیے.
مضبوط پاکستان کے لیے ایمانداری بہت ضروری ہے.
تخریر
بخت روم شاہ بونیری

اپنا تبصرہ بھیجیں