پاکستان میں جمہوریت کی تسلسل کی سے ملک دو پارٹی سسٹم کی طرف رواں دواں

الیکشن کمیشن آف پاکستان کے مطابق ملک بھر میں اس وقت 345 سیاسی جماعتیں رجسٹرڈ ہیں. اس وقت پاکستان میں 23 اقسام کی مسلم لیگ، 9 اقسام کی پیپلزپارٹی اور دیگر کئی جماعتیں رجسٹرڈ ہیں، اسمیں قومی اسمبلی میں کل 18 کے لگ بھگ جماعتوں کے ارکان موجود ہیں، خیبرپختونخوا میں 7، پنجاب میں 9، سندھ میں 7، بلوچستان میں 8 اور سینیٹ میں 14 جماعتوں کے ممبر اپنی سیاسی پارٹیوں کی نمائندگی کررہے ہیں، اسی طرح کل 11 بڑی سیاسی جماعتیں اس وقت قومی و صوبائی اسمبلیوں اور سینیٹ میں اپنا وجود رکھتی ہیں۔ لیکن خوش آئیند بات یہ ہے کہ پی ٹی آئی کے پاور میں آنے کے بعد تقریباً تین بڑی پارٹیاں رہ گئی ہیں. پی ٹی آئی, پی ایم ایل این اور پی پی پی پی. قوم نے بہت سارے لوگوں کو مسترد کرکے انکا نام ونشان پارلیمنٹ سے غائب کروادیا. تقریباً سب ہی نے اپنی شکست تسلیم کرکے 2023 کے لیے تیاری شروع کردی ہے. لیکن ایک صاحب 4 ستمبر 2018 تک اپنی شکست تسلیم کرنے سے مسلسل انکار کررہے تھے. لیکن 4 ستمبر کو جب پارلیمنٹ نے بھی مسترد کردیا تو شائد اب تسلی ہوگئی ہوگی. سیاست میں ایک بات بہت اچھی ہوتی ہے کہ ان کے غرور کا نشہ بہت جلدی چڑھتا بھی ہے اور بہت جلدی اترتا بھی ہے.
اللہ سے دعا ہے کہ اس ملک میں جمھوریت مضبوط ہو اور تسلسل صدیوں تک جاری رہے تاکہ عوامی حکومت عوام کے کام آئے. اور دو پارٹی سسٹم قائم ہوجائے
تخریر و تجزیہ
صوبیدار میجر (ر) بخت روم شاہ تمغہ خدمت عسکری
سیاسی و سماجی کارکن پی ٹی آئی بونیر خیبر پختونخواہ

اپنا تبصرہ بھیجیں