266

پاکستان میں ایک فیصد پولیس بھی رشوت نہیں لیتا

رشوت خور پولیس!
ایک دن ایک صاحب نے کہا کہ پولیس والے تو رشوت خور ہوتے ہیں.

ہاں شائد پولیس والے تو ر شوت خور ہوتے ہیں کیونکہ جب تم اپنی کچی جوانی کو کھیل کود کر enjoy کر رہے ہوتے ہو تم ہم پریڈ گراؤنڈ میں کالی وردی پہنے قرآن پاک پر حلف اٹھا رہے ہوتے ہیں اس دھرتی ماں کہ تقدس پر مر مٹنے کا.




جب تم اپنے عشق کی پروان چڑھانے کی منصوبہ بندی کر رہے ہوتے ہو تب ہم اس دھرتی کی ماؤں بہنوں کے ناپاک دشمنوں سے لڑنے میں مصروف ہوتے ہیں کیونکہ ہم رشوت خور ہیں .
جب تم اپنے گھروں میں سو رہے ہوتے ہو تب ہم شہر میں سینہ تان کے تمہارا دفاع کر رہے ہوتے ہیں .

جب تم یخ بستہ راتوں میں رضائی میں دبکے ہوتے ہو ہم موسم کی شدت کے باوجود سنسان ویران راستوں پر جاگ رہے ہوتے ہیں کیونکہ ہم رشوت خور ہیں.




جب تم اپنے دوستوں کہ ساتھ پارٹیاں چلا رہے ہوتے ہو تب ہم خشک چنے کھا کہ پانی پی کر خدا کا شکر ادا کر رہے ہوتے ہیں کیونکہ ہم رشوت خور ہیں.

عیدو تہواروں پر جب تمہارے بچے تمہارے زیر سایہ اچھل کود رہے ہوتے ہیں تو ہمارے بچے ہماری راہ تکتے ہیں کہ جانے کب ان کے رشوت خور بابا گھر آئیں گے اور ان کی عید شروع ہوگی.

جب تمہیں ایک سوئی لگنے پر پورا گھر پریشان ہو رہا ہوتا ہے تب ھمارے گھر والے ہماری لہو میں ڈوبی جوان لاشیں دیکھ کر شکر ادا کر رہے ہوتے ہیں کیونکہ ہم رشوت خور ہیں.




جب تم اپنے بچوں کے لیے چیزیں لے کر جاتے ہو اس وقت ھمارے بچے ہماری قبروں سے لپٹ کر باپ کو ترستے ہیں.
جب تم اپنی بیویوں کے ناز نخرے سے لطف اندوز ہوتے ہو اس وقت ہماری بیویاں اپنے ارمان پاک وطن پر قربان کر چکی ہوتی ہیں .

جب تمہارے والدین تمہیں اپنی آنکھوں سے دور نہیں کرنا چاھتے تب ھمارے گھر والے پاک پرچم میں لپٹی ہماری لاشیں وصول کر رہے ہوتے ہیں .ہاں ہم فخر سے کہتے ہیں کہ ہم پولیس والے ہیں رشوت خور کیونکہ پاک پرچم صرف ہم رشوت خوروں کہ سینے تابوت یا قبر پر ہوتا ہے تم عقلمندوں کے نہیں.




M Hussain Qadir SI RRF.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں